Web
Analytics
’’بھائی فلٹر تو بند کرلو ، بندہ بلی بنا ہوا ہے‘‘پی ٹی آئی سوشل میڈیا ٹیم کی وزیراعظم کے خطاب میں گڑبڑ کے بعد ایک اور غلطی نےپارٹی کامذاق بنوا دیا – Lahore TV Blogs
Home / پاکستان / ’’بھائی فلٹر تو بند کرلو ، بندہ بلی بنا ہوا ہے‘‘پی ٹی آئی سوشل میڈیا ٹیم کی وزیراعظم کے خطاب میں گڑبڑ کے بعد ایک اور غلطی نےپارٹی کامذاق بنوا دیا

’’بھائی فلٹر تو بند کرلو ، بندہ بلی بنا ہوا ہے‘‘پی ٹی آئی سوشل میڈیا ٹیم کی وزیراعظم کے خطاب میں گڑبڑ کے بعد ایک اور غلطی نےپارٹی کامذاق بنوا دیا

اسلام آباد(نیوز ڈیسک) پی ٹی آئی سوشل میڈیا ٹیم کی عمران خان کے خطاب میں گڑبڑ کے بعد ایک اور غلطی سامنے آ گئی، خیبرپختونخوا حکومت کی سوشل میڈیا ٹیم وزیر اطلاعات شوکت یوسف زئی کی پریس کانفرنس کے دوران “کیٹ فلٹر” بند کرنا بھول گئی، تصویر نے ہر کہیں مذاق بنوا دیا۔تفصیلات کے مطابق وزیر اطلاعات شوکت یوسف زئی نے ایک پریس کانفرنس کی لیکن اس دوران خیبرپختونخوا حکومت کی سوشل میڈیا ٹیم کیٹ فلٹر بند کرنا بھول گئی۔جس وجہ سے شوکت یوسف زئی کے ساتھ موجود شخص کے چہرے پر فلٹ بن گیا۔اس کی تصویر بھی سوشل میڈیا پر وائرل ہو گئی جس کے بعد پی ٹی آئی کا خوب مذاق بنا۔جب کہ سوشل میڈیا صارفین لائیو سیشن کے دوران یہ بھی

کمنٹ کرتے رہے کہ فلٹر تو ہٹا دیں۔خیال رہے دو روز قبل حکومت کی سوشل میڈیا ٹیم نے وزیراعظم عمران خان کے خطاب میں بھی گڑ بڑ کی تھی۔ دو روز قبل وزیراعظم اسلامی جمہوریہ پاکستان عمران خان نے قوم سے خطاب کیا۔عمران خان کے خطاب کے لیے سوا نو بجے کا وقت مقرر کیا گیا تھا لیکن خطاب کو رات 12 بجے کے بعد نشر کیا گیا ۔ اس حوالے سے سینئیر صحافی و کالم نگار عمار مسعود نے مائیکروبلاگنگ ویب سائٹ ٹویٹر پر اپنے پیغام میں ایک لنک شئیر کیا اور کہا کہ وزیراعظم آفس سے منسلک ایک اہم ذریعے نے بتایا کہ وزیراعظم عمران خان کا خطاب پاکستان تحریک انصاف سے وابستہ ایک شخصیت کی نجی کمپنی نےریکارڈ کیا تاہم وہ یہ بتانے کی پوزیشن میں نہیں ہیں کہ اس کے لیے کتنی رقم ادا کی گئی۔وزیراعظم عمران خان کے قوم سے خطاب کے لیے پہلے سوا نو بجے رات کا وقت مقرر کیا گیا لیکن ریکارڈنگ میں غلطیوں اور ایڈیٹنگ کی وجہ سے رات بارہ بجے کے لگ بھگ نشر کیا گیا۔ لیکن پاکستان کے وزیراعظم عمران خان کے قوم سے ریکارڈڈ خطاب میں بھی غلطی ہوئی جس کی وجہ سے سرکاری ٹی وی کو پہلے آواز اور پھر خطاب ہی روکنا پڑا۔ پاکستان ٹیلی ویژن پر خطاب شروع ہوتے ہی جب وزیراعظم نے مدینے کی ریاست کی تعریف بتانا شروع کی تو پہلے آواز بند کی گئی اور بعد ازاں خطاب ہی روک دیا گیا۔اس حوالے سے سوشل میڈیا پر افواہیں بھی پھیلائی گئیں کہ وزیراعظم عمران خان کا غلط ایڈٹ شدہ خطاب نشر ہونے کی وجہ سے روکا گیا اور پھر دوبارہ درست ورژن نشر کیا گیا۔ مستند ذرائع نے بتایا کہ وزیراعظم عمران خان کے خطاب میں اسلامی تاریخ کے حوالوں کی غلطی سے بچنے کے لیے ان کی آواز صرف مدینے کی ریاست کی مثالوں کے وقت بند کی گئی۔ اس کے علاوہ وزیراعظم عمران خان کے خطاب میں پیپلز پارٹی اور ن لیگ پر پانچ منٹ تک تنقید بھی کی گئی تھی۔