Web
Analytics
بے نامی جائیدادیں ضبط کرکے فروخت کی جائینگی اور پیسہ کس کام کیلئے استعمال کرینگے، وزیراعظم نے غریب عوام کیلئے شاندار اعلان کردیا – Lahore TV Blogs
Home / اہم خبریں / بے نامی جائیدادیں ضبط کرکے فروخت کی جائینگی اور پیسہ کس کام کیلئے استعمال کرینگے، وزیراعظم نے غریب عوام کیلئے شاندار اعلان کردیا

بے نامی جائیدادیں ضبط کرکے فروخت کی جائینگی اور پیسہ کس کام کیلئے استعمال کرینگے، وزیراعظم نے غریب عوام کیلئے شاندار اعلان کردیا

اسلام آباد(نیوز ڈیسک) وزیراعظم عمران خان نے بے نامی جائیدادوں کا پیسا احساس پروگرام میں ڈالنے کا اعلان کردیا۔ انہوں نے کہا کہ احساس پروگرام کیلئے200 ارب مختص کیے ہیں،لگتا ہے بے نامی جائیدادوں کا پیسا احساس پروگرام میں ڈالنے سے رقم قومی بجٹ سے بھی بڑھ جائے گی۔ انہوں نے آج احساس پروگرام کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہر مہینے ہم انصاف پروگرام کیلئے مختلف چیزیں سامنے لاتے رہیں گے۔اس پروگرام میں جن لوگوں نے بھی شراکت داری کی ان سب کو مبارکباد پیش کرتا ہوں، ہم پہلی بار پاکستان میں غربت کو کم کرنے کا پروگرام لا رہے ہیں، اس میں تمام وزارتوں کا کردار ہوگا۔ہمارااس وقت

60 فیصد نوجوان 30 سال سے کم عمر ہیں، یہ ہماری بڑی فورس ہے، اگر ہم ان کو ہنرمند شہری بنا دیں، یہی لوگ ملک کا بوجھ اٹھا لیں گے۔عمران خان نے کہا کہ میں 18سال کا تھا جب برطانیہ گیا، میں نے وہاں جاکر دیکھا کہ انسانیت کیا ہوتی ہے۔مجھے اس اسلامی ملک میں انسانیت نظر نہیں آئی جو اسلام کے نام پر بنا، میں نے برطانیہ میں انسانوں کی ہی نہیں جانوروں کی قدر دیکھی۔مجھے تب دین کا علم نہیں تھا۔ لیکن بعد میں اسلام کی تاریخ پڑھی، ہمیں یہاں قرآن پاک پڑھا دیتے ہیں لیکن آگے کا کچھ پتا نہیں ہوتا۔میں ریاست مدینہ کا مطالعہ کیا، میں نے کسی جمعے کے خطبے میں نہیں سنا کہ ریاست مدینہ کیا ہے؟ ریاست مدینہ میں ماڈرن ریاست تھی،ریاست مدینہ کے تمام چیزیں جدید دور کے مطابق تھیں، وہاں کمزور طبقات کا احساس تھا ۔جانوروں اور انسانوں میں فرق یہ ہے کہ جانوروں کے معاشرے میں کوئی احساس نہیں ہوتا۔عمران خان نے کہا کہ ہم پانچ وقت کی نماز میں یہ مانگتے ہیں کہ ہمیں ان لوگوں کے راستے پر لگا دے۔نبی پاک ﷺ نے راستہ دکھایا کہ ریاست کی ذمہ داری انسانوں ، کمزوروں اورعورتوں کو حقوق دینا، غلاموں کوبھی اوپراٹھا دیا، حضرت بلال (رضی اللہ تعالیٰ عنہ) نے دو مہم چلائیں۔ریاست مدینہ نے 700سال تک دنیا کے مثال بن گئی۔ لوگ ان کا کلچردیکھ کرمسلمان ہوگئے تھے۔احساس کے بغیر کوئی قوم تہذیب وتمدن کا گہوارہ نہیں بن سکتی۔ لوگوں کو ہمارے دین کی سمجھ ہی نہیں ہے۔ وزیراعظم نے کہا کہ ریاست مدینہ کے مشن پر ہم چلیں گے، نیا پاکستان لوگوں کو غربت سے نکالے گا۔چین کی مثال ہے، چین کا مطالعہ کریں توچین نے ریاست مدینہ کے ماڈل کو اپنایا اور 70 کروڑ لوگوں کو غربت سے نکالا۔آج چین کا جی ڈی پی 10بلین ڈالر

ہے۔وزیراعظم عمران خا ن نے کہا کہ میں سنتا تھا کہ ایشیئن ٹائیگر بنادوں گا، موٹروے بنادوں گا، لاہور کو پیرس بنا دوں گا ، یہ ترقی نہیں ہے۔لیکن یہاں لوگوں میں احساس نہیں ،غریبوں کیلئے الگ اور امیروں کا الگ ہسپتال ہے۔ایڈز کا اب پتا چلا جب لاڑکانہ میں پھیلی۔یہاں جو اٹھتا ہے لندن علاج کروانے چلا جاتا ہے۔عمران خان نے کہا کہ ہمارے شہریوں میں بہت احساس ہے۔میں نے ہسپتال بنائے اور یونیورسٹی بنائی۔عمران خان نے کہا کہ ہماری حکومت ایلیٹ ہے، اربوں کا علاج ہوتا ہے۔احساس پروگرام کیلئے 200 ارب مختص کیے ہیں۔اس پروگرام کو شفاف بنائیں گے۔ آج ہم 82 ہزار لوگوں کو سود کے بغیر قرضے دے رہے ہیں۔

کمزور طبقات کو اوپر اٹھائیں گے۔وزیراعظم نے کہا کہ میں نے فیصلہ کیا ہے کہ بے نامی پراپرٹی کی نشاندہی کرنے والے کو 10فیصد دیں گے۔بے نامی جائیداد کا پیسا ہم احساس پروگرام میں ڈال دیں گے، ابھی 200 ارب ہے، بے نامی جائیداد کا پیسا ہمارے قومی بجٹ کو بھی بڑھ جائے گا۔وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ زندگی سیاست ہے، ثانیہ گھبراتی ہیں جب میں سیاست پر بات کرتا ہوں۔ارسطو نے کہا کہ معاشرے میں اگر ظلم ہوتوسارے لوگ سیاسی ہوجائیں گے۔ سیاستدان متنازع ہوتا ہے۔ لیکن دو طرح کے لوگ بزدل اور خودغرض سیاست میں نہیں جائیں گے۔کیونکہ گاڑیاں ہیں، گھر ہے، لندن میں رہن سہن ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہرروز سنتا

ہوں کہ شہبازشریف کہتا کہ عمران خان اتنی سزادینا جتنی برداشت کرسکتے ہو، میرا پیغام ہے کہ میں توموت بھی برداشت کرسکتا ہوں۔لیکن آپ لوگ موت برداشت نہیں کرسکتے، کیونکہ آپ لوگوں نے چوری کا پیسا لندن میں رکھا ہوا ہے ، اس پیسے کو انجوائے کرنے کا خوف بھی ہے۔وزیراعظم نے کہا کہ ایک طرف 30ہزار ارب کا ملک پر قرض چڑھا رہے تھے، مثال کے طور پراگر ایک گھر پر قرض چڑھتا ہے توباپ اپنے بچوں کی خاطر خرچے کم کرے گا۔ایک طرف قوم قرضوں میں جارہی ہے،قوم کے پیسے پر 40دورے آصف زرداری دبئی اور نوازشریف چالیس ڈورے لندن کے کرتا ہے۔میں نے اور شبرزیدی نے چیلنج لیا ہے کہ ہم

ایف بی آر کو ٹھیک کریں گے۔صرف عوام کے ٹیکس کا پیسا عوام پر خرچ کریں گے۔ بعدازاں وزیراعظم نے اسلام آباد ایئرپورٹ پرروڈ ٹو مکہ پروگرام کا افتتاح کردیا۔وزیراعظم عمران خان کی زیرصدارت ملکی ائیرپورٹس کے بہترانتظامات کویقینی بنانے سے متعلق اجلاس ہوا۔اجلاس میں وزیرہوابازی غلام سرورخان، عبدالرزاق، ڈاکٹرفردوس عاشق اعوان، ندیم افضل چن، یوسف بیگ مرزا، چیئرمین سرمایہ کاری بورڈ زبیرگیلانی، سیکریٹری ہوابازی شاہ رخ نصرت، سیکرٹری ڈیفنس لیفٹیننٹ جنرل(ر) اکرام الحق اور سی ای اوپی آئی اے بھی شریک ہوئے۔ سی ای او پی آئی اے نے وزیراعظم کو پی آئی اے اصلاحات کے سلسلے میں اب تک کی پیش رفت سے آگاہ کیا۔وزیراعظم کو ائیرپورٹس کے انتظامات سے متعلق غیر ملکی اداروں اورکمپنیوں کیجانب

سے اظہاردلچسپی پربھی بریفنگ دی گئی۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ بیرون ملک مقیم پاکستانیوں، سرمایہ کاروں اورسیاحوں کو بہترین سہولیات فراہم کرنا اولین ترجیح ہے۔ ریگولیشن اورہوائی اڈوں کے انتظامات کوعلیحدہ کرنے کا عمل جلد ازجلد پایہ تکمیل کو پہنچایا جائے۔ انہوں نے کہا کہ ہوائی اڈوں کے بہترانتظامات سے متعلق دلچسپی کا اظہارکرنیوالی غیرملکی کمپنیوں کوخوش آمدید کہا جائے گا۔